کسی نے تو پکارا ھو گا

غم نصیبوں کو ، کسی نے تو پکارا ھو گا اِس بَھری بزم میں ، کوئی تو ھمارا ھو گا آج کس یاد سے چَمکی تیری چشمِ پُرنَم ؟؟ جانے یہ ، کس کے مقدر کا ستارا ھو گا جانے اب حُسن لٹائے گا ، کہاں دولتِ درد جانے

Read More

ﺟﺎﻥ ﺳﮯ ﭘﯿﺎﺭﺍ ﺗﮭﺎ ﺍﻭﺭ ﺑس

ﻟﻮﮔﻮﮞ ﻧﮯ ﺍُﺳﮯ ﻣﯿﺮﯼ ﻣﺤﺒﺖ ﺳﻤﺠﮫ ﻟﯿﺎ ﻣﺤﺴﻦ ﻭﮦ ﻣﺠﮫ ﮐﻮ ﺟﺎﻥ ﺳﮯ ﭘﯿﺎﺭﺍ ﺗﮭﺎ ﺍﻭﺭ ﺑس ﺩﮬﮍﮐﻦ ﮐﯽ ﺍﻟﮭﺠﻨﻮﮞ ﮐﻮ ﺳﻨﻮﺍﺭﺍ ﺗﮭﺎ ﺍﻭﺭ ﺑﺲ ﮐﺎﻏﺬ ﭘﮧ ﺩﻝ ﮐﺎ ﺑﻮﺟﮫ ﺍُﺗﺎﺭﺍ ﺗﮭﺎ ﺍﻭﺭ ﺑﺲ ﺑﺲ ﺍِﺗﻨﺎ ﺟﺎﻧﺘﺎ ﮨﻮﮞ ﺁﻭﺍﺯ ﺍُﺱ ﮐﯽ ﺗﮭﯽ ﺍِﺗﻨﺎ ﭘﺘﮧ ﮨﮯ

Read More

میرے پاس چلے آنا

جب جوبن تیرا ڈھل جائے جب پیار کی عمر نکل جائے جب چھوڑ دے تجھ کو حُسن تیرا جب چہرہ پُر ہو جھریوں سے جب زلف کے خم نہ ہوں باقی جب رنگت نہ ہو گالوں میں جب چاندی اترے بالوں میں جب آنکھ کی مستی ٹوٹ چکے

Read More

مرے ہجر کا تُو علاج کر کوئی حل بتا مرے سائیاں

مرے ہجر کا تُو علاج کر کوئی حل بتا مرے سائیاں مرے درد کو مرے کرب کو تُو پرے ہٹا مرے سائیاں مجھے دیکھ جا مرے چارہ گر میں تری نظر کا شکار ہوں کہاں کیوں ہوا کہاں کیا ہوا نہ مجھے سنا مرے سائیاں زرا

Read More

مرے ہجر کا تُو علاج کر

مرے ہجر کا تُو علاج کر کوئی حل بتا مرے سائیاں مرے درد کو مرے کرب کو تُو پرے ہٹا مرے سائیاں مجھے دیکھ جا مرے چارہ گر میں تری نظر کا شکار ہوں کہاں کیوں ہوا کہاں کیا ہوا نہ مجھے سنا مرے سائیاں زرا

Read More

اگر کبھی میری یاد آئے

اگر کبھی میری یاد آئے تو چاند راتوں کی نرم دلگیر روشنی میں کسی ستارے کو دیکھ لینا اگر وہ نخل فلک سے اڑ کر تمہارے قدموں میں آ گرے تو یہ جان لینا وہ استعارہ تھا میرے دل کا اگر نہ آئے مگر یہ ممکن ہی

Read More

کوئی ایسا جادو ٹونہ کر

کوئی ایسا جادو ٹونہ کر۔ مرے عشق میں وہ دیوانہ ہو۔ یوں الٹ پلٹ کر گردش کی۔ میں شمع، وہ پروانہ ہو۔ زرا دیکھ کے چال ستاروں کی۔ کوئی زائچہ کھینچ قلندر سا کوئی ایسا جنتر منتر پڑھ۔ جو کر دے بخت سکندر

Read More

پاکیزہ ہیں جو لوگ، وہ کیا کیا نہیں کرتے

ہم اہل وفا حسن کو رسوا نہیں کرتے، پردہ بھی اٹھے رخ سے تو دیکھا نہیں کرتے۔ دل اپنا تصور سے ہی کر لیتے ہیں روشن، موسیٰ‌کی طرح طور پہ جایا نہیں کرتے۔ رکھتے ہیں جو اوروں کےلئے پیار کا جذبہ، وہ لوگ

Read More

مے خانے پہ کیا گزری

سبو پر جام پر شیشے پہ پیمانے پہ کیا گزری نہ جانے میں نے توبہ کی تو مے خانے پہ کیا گزری ملیں تو فائزان منزل مقصود سے پوچھوں گزر گاہ محبت سے گزر جانے پہ کیا گزری کسی کو میرے کاشانے سے ہمدردی نہیں

Read More

کِتنا بڑا عذاب ہے جینا تِرے بغیر

‏تُو آشنائے شدتِ غم ہو تو کچھ کہوں کِتنا بڑا عذاب ہے جینا تِرے بغیر بے کیف ہیں یہ ساغر و مینا ترے بغیر​ آساں ہوا ہے زہر کا پینا ترے بغیر​ کیا کیا ترے فراق میں کی ہیں مشقّتیں​ اِک ہو گیا ہے خُون

Read More